اردو جواب پر خوش آمدید

اردو جواب کی طرف سے تمام اہلِ اسلام کو رمضان کی بابرکت گھڑیاں مبارک ہوں!

+1 ووٹ
53 مناظر
نے سیاست اور حکومت میں
?What is peca ordinance

1 جوابات

+1 ووٹ
(11.8ہزار پوائنٹس) نے
پاکستان فیڈرل یونین آف جرنلسٹس نے پاکستان الیکٹرانک کرائمز ایکٹ (PECA) آرڈیننس 2022 کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے 28 فروری کو یوم سیاہ منانے کا اعلان کیا ہے۔پی ایف یو جے کے مطابق یہ ایک سخت قانون ہے، اس کا مقصد میڈیا کی آزادی کو روکنا اور اختلاف رائے کو دبانا ہے۔
سائبر کرائم قانون میں ترمیم کرنے والے متنازعہ صدارتی آرڈیننس پر تمام حلقوں کی جانب سے شدید تنقید کی گئی ہے۔ پی ایف یو جے کی جانب سے اس اقدام کے خلاف دائر درخواست کی سماعت کرتے ہوئے، اسلام آباد ہائی کورٹ نے ایف آئی اے کو پیکا کے سیکشن 20 کے تحت گرفتاریوں سے روک دیا، جو قانون نافذ کرنے والے ادارے کو وسیع تر دائرہ کار فراہم کرتا ہے۔
دیگر تبدیلیوں پر اثر انداز ہونے کے ساتھ ایک چیز جس نے اس قانون کو اور بھی زیادہ سخت کردیا ہے وہ یہ ہے کہ یہ آرڈیننس آن لائن ہتک عزت کو ایک ناقابل ضمانت، قابل سزا جرم بناتا ہے اور جیل کی سزا کو زیادہ سے زیادہ پانچ سال تک بڑھا دیتا ہے۔ اس حقیقت کے بارے میں شاید ہی دو رائے ہوں کہ یہ ایک سخت قانون ہے جس پر حکومت کو سنجیدگی سے نظر ثانی کی ضرورت ہے۔
پی ٹی آئی کے آرڈیننس کو یہ بھی یاد رکھنے کی ضرورت ہے کہ ملک میں ایک فعال پارلیمنٹ ہے۔ تاہم، پی ٹی آئی کی زیرقیادت حکومت کا عام پارلیمانی طریقہ کار کو نظرانداز کرنا اور ایسے متنازعہ قوانین پر بحث و مباحثے سے گریز کرنا ایک عام عمل بن چکا ہے۔
حکومت میں کچھ سنجیدہ آوازیں اسے ایک مختلف سمت اختیار کرنے پر زور دے رہی ہیں۔ ان میں، درحقیقت، وفاقی وزیر برائے آئی ٹی سید امین الحق بھی ہیں، جو اس بات کی نشاندہی کرتے ہیں کہ اس غیر سوچے سمجھے اقدام کے پیچھے چند منتخب افراد کا ہاتھ تھا۔ یہاں تک کہ ملک کے اعلیٰ قانون کے اہلکار، اٹارنی جنرل برائے پاکستان خالد جاوید خان نے ایک نیوز چینل سے بات کرتے ہوئے کہا کہ اگر یہ آرڈیننس اسی انداز میں نافذ ہوتا ہے تو یہ سخت ہو گا۔
دنیا بھر میں ہتک عزت کے قوانین ماضی کی بات بنتے جا رہے ہیں اور ایسے کسی بھی الزامات کو ثابت کرنے کے لیے کافی سخت شرائط موجود ہیں۔ پاکستان میں بھی ہتک عزت کے قوانین پہلے سے موجود ہیں اور مزید کوئی ایسا آرڈیننس نافذ کرنے کی ضرورت نہیں ہے جو لوگوں کے آزادی اظہار کے حق پر براہ راست خلاف ورزی کرتا ہو۔
اگر یہ ترامیم قانون بن جاتی ہیں تو یہ الیکٹرانک اور پرنٹ سے لے کر سوشل میڈیا تک تمام سطحوں پر ملک کے میڈیا منظر نامے کو بری طرح متاثر کرے گی۔ پاکستان کا آئین آرٹیکل 19 اور 19-A کے تحت لوگوں کے بنیادی حقوق کی ضمانت دیتا ہے اور ان حقوق کی خلاف ورزی کی کسی بھی کوشش کو کسی بھی جمہوری معاشرے میں آزاد میڈیا اور آزاد شہری چیلنج کر سکتے ہیں۔
اگرچہ نفرت انگیز تقاریر اور تشدد پر اکسانے کو ہمیشہ قانون کے ذریعے جانچنا چاہیے، پیکا اپنی موجودہ شکل میں اور ترمیم کے ساتھ اس چیلنج کا جواب نہیں ہے۔ سوشل میڈیا نے ہر شہری کو آواز دی ہے اور حکومت کی طرف سے اس آواز کو خاموش کرنے کی کسی بھی کوشش کو چیلنج کرنے کی ضرورت ہے۔

بشکریہ ایم ایم نیوز ڈاٹ ٹی وی
https://mmnews.tv/urdu/peca-ordinance/

السلام علیکم!

ارود جواب پرخوش آمدید۔

اردو جواب کی طرف سے تمام اہلِ اسلام کو رمضان کی بابرکت گھڑیاں مبارک ہوں!

کیا آپ کے ذہن میں کوئی ایسا سوال ہے جس کا جواب جاننا چاہتے ہیں؟ اگر ہاں! تو آپ بالکل درست جگہ آئے ہیں۔ کیونکہ اردو جواب پر فراہم کیے جاتے ہیں آپ کے سوالات کے جوابات، وہ بھی انتہائی آسان لفظوں میں۔ سوال خواہ کتنا ہی مشکل کیوں نہ ہو مگر ہمارے ماہرین کیلئے کچھ بھی مشکل نہیں۔ تو ابھی اپنا سوال پوچھیے اور جواب حاصل کیجئے۔

اگر آپ بھی اردو جواب پر موجود کسی سوال کا جواب جانتے ہیں تو جواب دے کر لوگوں میں علم بانٹیں، کیونکہ علم بانٹے سے ہی بڑھتا ہے۔ تو آج اور ابھی ہماری ٹیم میں شامل ہوں۔

اگر سائٹ کے استعمال میں کہیں بھی دشواری کا سامنا ہو تودرپیش مسائل سے ہمیں ضرور آگاہ کیجیئے تاکہ ان کو حل کیا جا سکے۔

شکریہ



Pak Urdu Installer

ہمارے نئے اراکین

764 سوالات

854 جوابات

429 تبصرے

403 صارفین

...